غم اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا صبر -
متفرقات

غم اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا صبر

Read Time1Second

 

? صادق تیمی

ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮨﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺏ ِ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺶ ﺍﻭﺭ ﻣﺼﯿﺒﺖ،غم و الم ﮐﺎ ﻟﻔﻆﺿﺮﻭﺭ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﺑﭽﮧ ﮨﻮ ﮐﮧ ﺑﻮﮌﮬﺎ ، ﺟﻮﺍﻥ ﮨﻮ ﮐﮧ ﺍﮈﮬﯿﺮ ، ﻣﺮﺩ ﮨﻮﮐﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﮐﻮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﻣﺮﺣﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺸﯽ ﺩﻭﺭ ﺳﮯ ﮔﺬﺭﻧﺎ ﭘﮍﺗﺎﮨﮯ ،ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺶ ﻭ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯼ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯﮐﮧ ﺍٓﺩﻣﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﻭﺭ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺍٓﺯﻣﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯﺗﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﻡ ﻭﻣﻠﺖ ﮐﻮ ﺍٓﺯﻣﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ،ﺍﻭﺭ ﮐﺒﮭﯽ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺶ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮐﺒﮭﯽﺩﻧﯿﺎ ﻭﯼ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭﺳﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ،ﺍﻟﻐﺮﺽ ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﺋﮯ ﺭﻧﮓ ﻭ ﺑﻮ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﭘﻨﯽﺣﯿﺜﯿﺖ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﺍٓﺯﻣﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎﮨﮯ ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺩﯾﮕﺮ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﻠﻨﺪ ﻣﻘﺎﻡ ﭘﺮ ﻓﺎﺋﺰ ﮨﮯ ، ﺍﻭﺭ ﺍﻟﮩﯽ ﺗﻌﻠﯿﻤﺎﺕ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻣﺘﯿﺎﺯﯼ ﺷﺎﻥ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻗﻮﻡ ﮨﮯ ، ﺍﺳﻠﺌﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺶ ﺑﮭﯽ ﺑﮍﺍ ﺳﺨﺖ ﮨﮯ ، ﮨﺮ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺍٓﺯﻣﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﮮ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺩﮦ ﺩﻭﺭ ﺳﮯ ﮔﺬﺍﺭﺍ ﮔﯿﺎ ، ﺣﻀﺮﺕ ﻧﻮﺡ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻮ ﺍﺳﻠﺌﮯ ﺗﮑﺎﻟﯿﻒ ﺩﯼ ﮔﺌﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﻮ ﺭﻭﺷﻦ ﮐﺮﻟﺌﮯ ، ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺑﻨﺪﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﻼﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﮐﺮﺩﺋﯿﮯ ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺪﻟﮧ ﻣﯿﮟ ﻗﻮﻡ ﻧﮯﮐﮩﺎ ’’ ﻗَﺎﻟُﻮﺍ ﻟَﺌِﻦْ ﻟَﻢْ ﺗَﻨْﺘَﻪِ ﻳَﺎ ﻧُﻮﺡُ ﻟَﺘَﻜُﻮﻧَﻦَّ ﻣِﻦَ ﺍﻟْﻤَﺮْﺟُﻮﻣِﻴﻦَ‘‘ﺍﮮ ﻧﻮﺡ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺱ ﺗﺒﻠﯿﻎ ﺳﮯ ﺑﺎﺯ ﻧﮩﯿﮟ ﺍٓﻭٔﮔﮯ ﺗﻮ ﺗﻢ ﮐﻮﯾﻘﯿﻨﺎﭘﺘﮭﺮ ﻣﺎﺭ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﮨﻼﮎ ﮐﺮﺩﯾﺎﺟﺎﺋﮯﮔﺎ ‏( ﺷﻌﺮﺍﺀ ۱۱۶ ‏) ﺍﻭﺭ ﻗﻮﻡ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ، ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻮ ﺍﺳﻠﺌﮯ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍٓﭖ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﻼﺋﮯ ، ﺍﻭﺭ ﻧﺎﭖ ﺗﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﺎﺯ ﺭﮐﮭﺘﮯ ، ﻗﻮﻡ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﮭﻼﺋﯽ ﭘﺮ ﮐﮩﺎ ’’ﻟَﻨُﺨْﺮِﺟَﻨَّﻚَ ﻳَﺎ ﺷُﻌَﻴْﺐُ ﻭَﺍﻟَّﺬِﻳﻦَ ﺁﻣَﻨُﻮﺍ ﻣَﻌَﻚَ ﻣِﻦْ ﻗَﺮْﻳَﺘِﻨَﺎ ﺃَﻭْ ﻟَﺘَﻌُﻮﺩُﻥَّ ﻓِﻲ ﻣِﻠَّﺘِﻨَﺎ ‘‘ﺍﮮ ﺷﻌﯿﺐ ﮨﻢ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺿﺮﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺴﺘﯽ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﻝ ﺩﯾﮞﮕﮯ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺗﻢ ﻟﻮﮒ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﺬﮨﺐ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻟﻮ‏( ﺍﻻﻋﺮﺍﻑ ۸۸‏) ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺸﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺣﻀﺮﺕ ﺷﻌﯿﺐ ؑ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻃﻦ ﮐﻮ ﺧﯿﺮ ﺑﺎﺩ ﮐﺌﮯ ، ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳﯽ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻮ ﺍٓﺯﻣﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ، ﻓﺮﻋﻮﻧﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳﯽؑ ﺍﻭﺭ ﺍٓﭖ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﻮﺏ ﻣﺼﺎﺋﺐ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮐﯿﺎ ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﺗﻔﺼﯿﻞ ﻗﺮﺍٓﻥ ﮐﺮﯾﻢ ﮐﯽ ﺍٓﯾﺘﻮ ﮞ ﻤﯿﮟ ﻟﮑﮭﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ ، ﻏﺮﺽ ﯾﮧ ﮐﮧ ﮨﺮ ﻧﺒﯽ ﮐﻮ ﺍٓﺯﻣﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺼﺎﺋﺐ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ، ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺧﺎﺗﻢ ﺍﻻﻧﺒﯿﺎﺀ ﺳﯿﺪ ﺍﻟﮑﻮﻧﯿﻦ ﻣﺤﺒﻮﺏِ ﺭﺏ ﺍﻟﻌﺎﻟﻤﯿﻦ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﺤﻤﺪ ﺍﻟﺮﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺍٓﺯﻣﺎئش اور غم و الم کے ﺩﻭﺭ ﺳﮯ ﮔﺬرنا پڑا ، ﺍٓﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺧﻮ ﺩ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺱ ﺣﺎﻟﺖ ﮐﻮ ﺑﯿﺎ ﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ’’ ﻟَﻘَﺪْ ﺃُﻭﺫِﻳﺖُ ﻓِﻲ ﺍﻟﻠَّﻪِ ﻭَﻣَﺎ ﻳُﻮْٔﺫَﻯ ﺃَﺣَﺪٌ ‘‘ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﮐﮧ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺍﺗﻨﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ‏( ﺗﺮﻣﺬﯼ ﺣﺪﯾﺚ ﻧﻤﺒﺮ۲۴۷۲‏) ﻭﮦ ﮐﻮﻧﺴﯽ ﺍٓﺯﻣﺎﺋﺶ ﮨﮯ وہ کون سا غم ہے ﺟﻮ ﺍٓﭖ ﷺ ﮐﮯ ﺣﺼﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺍٓیا ﮨﻮ ، ﺍٓﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯﺟﺲ ﻗﺪﺭ ﺍﺫﯾﺖ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﻨﺎ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﺍﻭﮦ ﻧﺎﻗﺎﺑﻞ ﺑﯿﺎﻥ ﮨﮯ،نبی کی زندگی میں اتنے غم لاحق ہوے کہ ایک سال کو عام الحزن ہی سے موسوم کیا گیا –
صاحب الرحیق المختوم کے مطابق نبوت کے ساتواں سال نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو شعب ابی طالب میں مسلسل تین سالوں تک رہنا پڑا اس غم سے آپ باہر ہی نکلے تھے اور محصوری کے چھ مہینے کے بعد ہی آپ کے دامے درمے قدمے سخنے ساتھ دینے والا پیارا چچا ابوطالب کا انتقال ہوگیا،جس سے آپ کو بہت زیادہ غم لاحق ہوا ،ﯾﮩﺎﮞ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺑﻮﻃﺎﻟﺐ ﻧﮯ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﺣﻤﺎﯾﺖ ﻭ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﺩﺭﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﮑﮯ ﮐﮯ ﺑﮍﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺣﻤﻘﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﻤﻠﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﮐﮯ ﺑﭽﺎﺅ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﻗﻠﻌﮧ ﺗﮭﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺑﺬﺍﺕِ ﺧﻮﺩ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺰﺭﮒ ﺁﺑﺎﺅ ﺍﺟﺪﺍﺩ ﮐﯽ ﻣﻠّﺖ ﭘﺮ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﻧﮧ ﭘﺎ ﺳﮑﮯ۔ لیکن اسے جہنم کی سب سے کم سزا دی جاے گی..ﺍﺑﻮﺳﻌﯿﺪ ﺧﺪﺭﯼ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﮐﺎ ﺑﯿﺎﻥ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﭖ ﮐﮯ ﭼﭽﺎ ﮐﺎ ﺗﺬﮐﺮﮦ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ: ‘‘ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮐﮯ ﺩﻥ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﻔﺎﻋﺖ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺟﮩﻨﻢ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﮐﻢ ﮔﮩﺮﯼ ﺟﮕﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﺁﮒ ﺻﺮﻑ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﭨﺨﻨﻮﮞ ﺗﮏ پہنچے گی – (ﺻﺤﯿﺢ ﺑﺨﺎﺭﯼ ﺑﺎﺏ ﻗﺼﺘﮧ ﺍﺑﯽ ﻃﺎﻟﺐ ۵۴۸)
اسی سال ﺟﻨﺎﺏ ﺍﺑﻮﻃﺎﻟﺐ ﮐﯽ ﻭﻓﺎﺕ ﮐﮯ ﺩﻭ ﻣﺎﮦ ﺑﻌﺪ ﯾﺎ ﺻﺮﻑ ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﺑﻌﺪ …. ﻋﻠﯽ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﺍﻻﻗﻮﺍﻝ …. ﺣﻀﺮﺕ ﺍُﻡّ ﺍﻟﻤﻮﻣﻨﯿﻦ ﺧﺪﯾﺠﮧ ﺍﻟﮑﺒﺮﯼٰ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮩﺎ ﺑﮭﯽ ﺭﺣﻠﺖ ﻓﺮﻣﺎ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻭﻓﺎﺕ ﻧﺒﻮﺕ ﮐﮯ ﺩﺳﻮﯾﮟ ﺳﺎﻝ ﻣﺎﮦِ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻭﮦ 65 ﺑﺮﺱ ﮐﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﯽ ﭘﭽﺎﺳﻮﯾﮟ ﻣﻨﺰﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ (ﺭﻣﻀﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻭﻓﺎﺕ ﮐﯽ ﺻﺮﺍﺣﺖ ﺍﺑﻦِ ﺟﻮﺯﯼ ﻧﮯ ﺗﻠﻘﯿﺢ ﺍﻟﻔﮩﻮﻡ ﺹ ۷ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻋﻼﻣﮧ ﻣﻨﺼﻮﺭ ﭘﻮﺭﯼ ﻧﮯ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﻌﺎﻟﻤن 2/265 میں ذکر کیا ہے )
موت انسانی زندگی کی سب سے بڑ ی لیکن ایک تلخ حقیقت ہے۔ اس لیے جب کبھی انسانوں کا اس سے سامنا ہوتا ہے تو مرنے والے کے لواحقین اور اس کے رشتہ داروں کا غمگین ہونا اور رونا فطری عمل ہے لیکن یہ فطری غم یہ صورت اختیار نہ لرلے جو نوحہ و بین تک پہنچ جاے ،نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے صاحبزادے جب انتقال ہوئے تو نبی کی آنکھوں سے آنسو تو بہے لیکن آپ نے اس غم کے موقع پر نہ رویا دھویا اور ناہی نوحہ و بین کیے جیسا کہ حدیث ہے کہ  ”انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ابو سیف لوہار کے پاس گئے۔ وہ ابراہیم (حضور کے صاحبزادے )کی دایہ کا شوہر تھا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ابراہیم کو اٹھایا ، پھر بوسہ لیا اور سونگھا۔ پھر ہم جب بعد میں دوبارہ اس کے پاس گئے جبکہ ابراہیم حالت نزاع میں تھا تونبی صلی اللہ علیہ وسلم کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے۔ عبدالرحمن بن عوف نے کہا: اے اللہ کے رسول ، آپ بھی روتے ہیں۔ فرمایا: اے ابن عوف یہ رحمت ہے۔ پھراس کے بعد روئے اور فرمایا: آنکھ آنسو بہا تی ہے ، دل غمگین ہے مگراس کے باوجود ہم وہی بات کہیں گے جس سے ہمارا رب راضی ہو۔ اور ہم اے ابراہیم تیری جدائی کے سبب غمگین ہیں۔” (متفق علیہ بحوالہ مشکوٰۃ: 1722)
اس سب کے علاوہ طائف کا واقعہ آپ کے سامنے موجود ہے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے جب یہاں پر آباد سرداران کو دین کی طرف بلایا تو ان لوگوں نے بجاے قبولیت کے آ پ کے پیچھے اوباش و بدمعاشوں کو لگا دیا آپ کے جسم اطہر کو لہو لہان کر دیا گیا, ایک طرف تو جسم کا درد ,دوسری طرف اتنی محنت و مشقت کے بعد عدم قبولیت اور جواب نہ دینے کا غم کے پہاڑ ،لیکن ایسے نازک موقع پر بھی نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے صبر کادامن اپنے ہاتھ سے چھوٹنے نہ دیا بلکہ پورے صبر و تحمل کے ساتھ اسے اپنے ذہن و دماغ سے ہٹا دیا اوران کے لیے دعاے خیر کی..اس لیے اگر دعوت و تبلیغ کی راہ میں اس طرح کی مشقتیں و مشکلات آئیں تو اسے برداشت کریں اور اپنا مشن کو جاری رکھیں..
اسی طرح نبی کی حاملہ بیٹی زینب پر کفار مشرکین نے حملہ کر دیا جس کی وجہ سے اسی درد میں آپ کا انتقال ہوگیا. اس سے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو بہت دکھ پہنچا ،بڑا غم لاحق ہوا لیکن یہاں پر بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم صبر کا دامن تھامے رہا – غزوہ احد کے موقع پر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا دندان مبارک شہید ہوگیا لیکن پھر بھی آپ واویلا مچایے اور ناہی افسوس کا اظہار کیا, بلکہ ان سارے واقعات و حادثات میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے پورے صبر و شکیبائی کے ساتھ آگے بڑھتے رہے اور دنیا کو پریٹیکلی طور پر عمل کرکے دکھا دیا اور غم و آلام میں سکون و طمانیت کے ساتھ رہنے کا طرز بھی سیکھا گیے.

0 0
0 %
Happy
0 %
Sad
0 %
Excited
0 %
Angry
0 %
Surprise

Related posts

سود کی مذمتیں

admin

دنیا کے کامیاب انسانوں کے بچپن

admin

معلم کے اوصاف

admin

Leave a Comment